ایسا گاؤں جہاں گھر میں جتنے بیٹے ہوں، لیکن بہو ایک ہی آتی ہے،حیران کن اور شرمناک تفصیلات آگئیں

گاؤں

ایسا گاؤں جہاں گھر میں جتنے بیٹے ہوں، لیکن بہو ایک ہی آتی ہے،حیران کن اور شرمناک تفصیلات آگئیں ہر لڑکے اور لڑکی کے شادی کو لے کر بہت سے سپنے اور خواب ہوتے ہیں لیکن بھارت کا ایک ایسا قبیلہ جس کے بارے میں آپ جان کر حیران اور پریشان ہوجائیں گے ۔ بھار ت کا ایک چھوٹاسا گاؤں جودھیرتن کے پاس ہی واقع ہے اس گاؤں میں ایک ایساعجیب وغریب دستورہے جوکہ سالہا سال سے وہاں چلا آرہا ہے۔ اوروہ یہ کہ گھر میں ایک بیٹاہودوبیٹے

ہوں پانچ بیٹے ہوں یادس بیٹے ہوں گھرمیںبہوصرف ایک ہی آئے گی.اس گائوں میں کھیتی باڑی ہی پیٹ پالنے کاایک ذریعہ ہے.یہاں کے گائوں کے لوگوں کاکہناہے کہ ہم اس رسم ورواج کواس لیے اپناتے ہیں کہ آنے والے وقتوں میں خاندان کی زمین کا بٹوارہ نہ ہو جائے اس گائوں میں کئی ایسے خاندان میں جن میں پانچ پانچ چھ چھ حتی ٰ کہ دس دس بھائیوں کے ایک ہی بیوی ہے ان میں سے ایک شخص نے امریکہ کے ایک اخبار کو انٹرویو دیتے ہوئے بتایا کہ ہم سب بھائی اپنی اکلوتی بیوی سے ہم بستری کرتے ہیں اور کوئی بھائی کسی دوسرے بھائی سے جیلس نہیں ہوتا،سخت قانون ہونے کے باعث قانونی طور پر سب سے بڑا بھائی ہی اکلوتی بیوی کا شوہر ہوتا ہے اور سب سے حیران کن بات یہ ہے کہ کسی باپ کواپنے بچے اورکسی بچے کواپنے باپ کاپتانہیں ہوتا۔اس شخص کا

کہنا تھا کہ یہ رواج ہمارے خاندان میں صدیوں سے چلاآرہاہے.اورہم امید کرتے ہیں کہ آنے والے وقتوں میں بھی اس رواج کواسی طرح نبھایاجائے گا.سخت قانون ہونے کے باعث قانونی طورپرسب سے بڑابھائی ہی اکلوتی بیوی کاشورہوتاہے.اورسب سے حیران کن بات یہ ہے کہ کسی باپ کواپنے بچے اورکسی بچے کواپنے باپ کاپتانہیں ہوتا.اس شخص کاکہناتھاکہ یہ رواج ہمارے خاندان میں صدیوں سے چلاآرہا ہے اورہم امید کرتے ہیں کہ آنے والے وقتوں میں بھی اس رواج کواسی طرح نبھایاجائے

Leave a Comment