اللہ کے یہ نام اس طرح سے پڑھ لو ہر کو ئی عزت کی نگاہ سے دیکھے گا،کئی لوگوں کا آزمایا ہوا وظیفہ

عزت

جب سے میں نے یہ وظیفہ شروع کیا ہے ۔ ہر کوئی مجھے عزت کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔ اور میرے گھر سے غریبی اور تنگدستی بھی ختم ہو گئی ہے۔ آج ہم آپ کی خدمت میں ایک بہترین وظیفہ لے کر حاضر ہوئے ہیں اس وظیفے کی برکت سے اور اللہ تعالی کی عطا سے ہر کوئی آپ کو عزت کی نگاہ سے دیکھے گا۔اور گھر سے غریبی اور تنگ دستی ہمیشہ کے لیے ختم ہو جائے گی۔ اگر آپ بھی ہر کسی کی نظروں میں اور ہر جگہ پرعزت پا نا چاہتے ہیں اور تنگدستی

کو دور کرنا چاہتے ہیں تو یہ وظیفہ آپ کے لیے بہت ہی مجرب ہے۔ آپ بھی اس عمل کو اللہ کی ذات پر پختہ اور کا مل یقین رکھتے ہوئے کر لیں۔یہ وظیفہ آپ نے ہر نماز کے بعد کر نا ہے اور یا اللہ یا عزیز کو چالیس مرتبہ پڑ ھنا ہے ۔ساتھ میں ایک مرتبہ درودِ پاک پڑ ھنا ہے۔ اور اسی طرح جب آپ رات کو سونے لگیں تو یا اللہ یا مھیمن کو پڑھتے پڑ ھتے سو جا نا ہے اس کی کوئی تعداد نہیں ہے۔اس عمل کو چالیس روز تک آپ نے جاری رکھناہے۔ ان شاء اللہ اس وظیفے کی برکت سے اور اللہ کی عطا سے معاشرے میں ہر کوئی آپ کی عزت کر ے گا۔ اگر آپ اپنے لیے دعا مانگنے سے پہلے دوسروں کے لیے دعا ما نگیں گے تو ان شاء اللہ آپ کی دعا ضرور قبول ہو گی۔ وظیفہ کر نے سے پہلے کچھ صدقہ و خیرات کر لیا کر یں۔ جب سے میں نے یہ وظیفہ شروع کیا ہے ۔ ہر کوئی

عزت کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔ اور گھر سے غریبی اورتنگدستی بھی ختم ہو گئی ہے۔جنت ایک مکان ہے کہ اللہ تَعَالٰی نے ایمان والوں کے لیے بنایا ہے، اس میں وہ نعمتیں مہیا کی ہیں جن کو نہ آنکھوں نے دیکھا، نہ کانوں نے سنا، نہ کسی [1] ؎ آدمی کے دل پر ان کا خطرہ گزرا۔ [2] جو کوئی مثال اس کی تعریف میں دی جائے سمجھانے کے لیے ہے، ورنہ دنیا کی اعلیٰ [3] ؎ سے اعلیٰ شے کو جنت کی کسی چیز کے ساتھ کچھ مناسبت نہیں ۔ وہاں کی کوئی عورت اگر زمین کی طرف جھانکے تو زمین سے آسمان تک روشن ہوجائےاور خوشبو سے بھر جائے اور چاند سورج کی روشنی جاتی رہے اور اُس کا دوپٹا دنیا ومافیہا سے بہتر۔ [4] اور ایک روایت میں یوں ہے کہ اگر حُور اپنی ہتھیلی زمین و آسمان کے درمیان نکالے تو اس کے حسن کی وجہ سے خلائق فتنہ میں پڑ جائیں اور

اگر اپنا دوپٹا ظاہر کرے تو اسکی خوبصورتی کے آگے آفتاب ایسا ہو جائے جیسے آفتاب کے سامنے چراغ [5] اور اگر جنت کی کوئی ناخن بھَر چیز دنیا میں ظاہر ہو تو تمام آسمان و زمین اُس سے آراستہ ہو جائیں اور اگرجنتی کا کنگن ظاہر ہو تو آفتاب کی روشنی مٹادے، جیسے آفتاب ستاروں کی روشنی مٹا دیتا ہے۔ [6] جنت کی اتنی جگہ جس میں کوڑا[7] رکھ سکیں دنیا و مافیہا سے بہتر ہے۔ [8] جنت کتنی وسیع ہے،اس کو اللہ و رسول ( عَزَّوَجَلَّ وَ صَلَّی اللہ تَعَالیٰ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ) ہی جانیں ، اِجمالی بیان یہ ہے کہ اس میں ۱۰۰سو درجے ہیں ۔

Leave a Comment